جونپور,6 اکتوبر(نامہ نگار)اتر پردیش کے ضلع جونپور کے موضع صبرحد میں گزشتہ دنوں شاہ گنج کوتوال رات ساڑھے تین بجے ایک کیس کے سلسلے میں بغیر وارنٹ دکھائے اور بغیر خاتون پولیس کو ساتھ لئےایک گھر میں گھس گئے۔شاہ گنج کوتوال رات کے آخری پہر گھر میں بغیر کسی اجازت کے داخل ہوئے تو اس وقت گھر میں صرف خواتین تھیں,اس کے بعد بھی کوتوال اپنے سات سپاہیوں کے ساتھ تقریبا آدھے گھنٹے تک سوال پوچھتے رہے۔کوتوال کی اس حرکت سے متاثرہ فیملی بری طرح سے خائف ہے اور اس معاملے میں کچھ بھی بولنے سے کترا رہی ہے۔

واضح رہے کہ جونپور کے تحصیل شاہ گنج کے موضع صبرحد باشںدہ کا گائوں کے ہی ایک شخص سے تنازعہ چل رہا ہے۔کوتوال کے مطابق متاثرہ کے اہل خانہ کے ایک فرد پر کیس درج ہے اور وہ اسی معاملے کو لیکر رات ساڑھے تین بجے دندناتے ہوئے گھر میں گھس گئے ۔اب سوال یہ اٹھتا ہیکہ کوتوال شاہ گنج کی یہ حرکت قانون کے اعتبار سے کتنی مناسب ہے؟

سوال یہ بھی ہیکہ کیا بغیر وارنٹ دکھائے اور لیڈی پولیس کے بغیر اتنی رات گئے گھر میں گھسنے کی قانون کی کون سی دفعہ اجاذت دیتی ہے?متاثرہ فیملی کوتوال کی اس حرکت کے بعد سے خوف کے سائے میں زندگی بسر کر رہے ہیں۔اب دیکھنا یہ ہوگا کہ متاثرہ فیملی کی مدد کیلئے کون آگے آتا ہے؟